Eid, Islam, moon sighting, Ramadhan, Roza, اسلام, رمضان المبارک, رویت ہلال, روزہ, عید

سوال ہونا چاہئے

سوال ہونا چاہئے۔۔۔

*مفتی پوپلزئی سے*
سوال ہونا چاہئے مفتی پوپلزئی سے ۔۔۔کہ جب حکومت نے رویت ہلال کمیٹی کا پورا ادارہ بنایا ہوا ہے جس کی صوبائی اور ذیلی کمیٹیاں بھی ہیں، جس میں ہر مکتبہ فکر کے علماء شامل ہیں، اور جس پر کسی مکتبہ فکر کے علماء کو اعتراض ہے نہ اس سے اختلاف، پھر آپ کیوں اس ادارے کی رویت سے انحراف کرتے ہیں؟ آپ کیوں حکومت کے خلاف علم بغاوت بلند کرتے ہیں؟ آپ کس حیثیت میں رویت ہلال کا اعلان کرتے ہیں؟
سوال ہونا چاہئے مفتی پوپلزئی سے ۔۔۔کہ اگر آپ سعودی عرب کے ساتھ چلنا چاہتے ہیں تو وضاحت کر دیجئے ہم اس کو قبول کر لیں گے۔۔۔ لیکن آپ جھوٹی رویت کا اعلان کیوں کرتے ہیں؟کیوں کذب بیانی کرتے ہیں؟
سوال ہونا چاہئے مفتی پوپلزئی سے ۔۔۔کہ ماہرین فلکیات کی تحقیقات بتا رہی ہوتی ہیں کہ چاند افق پر موجود ہی نہ ہو گا، یا غروب آفتاب سے قبل یا ساتھ یا فوری بعد غروب ہو جائے گا، پھر یہ چاند آپ کو کہاں اور کیسے نظر آ جاتا ہے؟
سوال ہونا چاہئے مفتی پوپلزئی سے ۔۔۔کہ قرآن کہتا ہے کہ الفتنۃ اشد من القتل۔۔۔ پھر آپ کیوں مسلمانوں میں تفرقہ ڈالتے ہیں؟ کیوں قومی و ملی یکجہتی کو پارہ پارہ کرتے ہیں؟ کیوں امت میں انتشار پیدا کر رہے ہیں؟
سوال ہونا چاہئے مفتی پوپلزئی سے ۔۔۔کہ قرآن کہتا ہے کہ و اذا قیل لھم لا تفسدوا فی الارض قالو انما نحن مصلحون۔۔۔ الا انھم ھم المفسدون ولٰکن لا یشعرون ۔۔۔ کیا آپ کا یہ طرز عمل آپ کو اس فہرست میں لاکھڑا نہیں کر رہا؟ آپ کو اللہ سے ڈر نہیں لگتا؟
سوال ہونا چاہئے مفتی پوپلزئی سے ۔۔۔کہ اگر آپ کو سعودی عرب بھیج دیا جائے یا آپ وہاں کے شہری ہوتے یا آپ کو آج وہاں کی شہریت عطا کر دی جائے تو کیا آپ وہاں ایسی کسی جرات کا تصور بھی کر پائیں گے؟
سوال ہونا چاہئے مفتی پوپلزئی سے ۔۔۔کہ آپ کس کے ایجنڈے پر عمل پیرا ہیں؟ کہ آپ کے عزائم کیا ہیں؟
سوال ہونا چاہئے مفتی پوپلزئی سے ۔۔۔کہ آپ سال میں صرف دو چاند کی رویت پر کیوں اس قدر ذمہ داری کا مظاہرہ کرتے ہیں؟ اور باقی دس ماہ کہاں غائب ہوجاتے ہیں؟
سوال ہونا چاہئے مفتی پوپلزئی سے ۔۔۔کہ محرم الحرام کی رویت کے وقت آپ کا احساس ذمہ داری کہاں سو جاتا ہے؟
سوال ہونا چاہئے مفتی پوپلزئی سے ۔۔۔کہ کیا آپ محرم الحرام کا چاند ادھر ادھر کرنے کی جرات ہمت کر سکتے ہیں؟
سوال ہونا چاہئے مفتی پوپلزئی سے ۔۔۔کہ آپ کے صرف دو چاند میں مسئلہ آتا ہے ، اختلاف آتا ہے ۔۔۔ باقی دس ماہ سیدھے کیسے ہو جاتے ہیں؟ باقی دس ماہ کی قمری تاریخیں کیوں بقیہ ملک سے آگے پیچھے نہیں ہوتیں؟ اور اگر ہوتی ہیں تو اب تک تو دس بارہ پندرہ دن کا فرق کیوں نہیں آ گیا آپ کے اور حکومت کے چاندوں کی رویت میں؟ کیا آپ بقیہ دس ماہ مرکزی رویت ہلال کمیٹی کے مطابق ہی چلتے ہیں؟

*مرکزی رویت ہلال کمیٹی سے*
سوال ہونا چاہئے مرکزی رویت ہلال کمیٹی سے۔۔۔کہ ایک شخص آپ کے خلاف برس ہا برس سے مسلسل علم بغاوت بلند کئے ہوئے ہے، آپ نے اب تک اس فتنے کی سرکوبی کے لئے کیا اقدامات اٹھائے؟
سوال ہونا چاہئے مرکزی رویت ہلال کمیٹی سے۔۔۔ کہ اس فتنے کی سرکوبی کے لئے آپ کے پاس کیا کوئی اختیارات ہیں؟ اور اگر اختیارات نہیں ہیں تو اب تک اختیارات حاصل کرنے کی کیا کوئی کوشش کی گئی؟ اور اگر نہیں کی گئی تو کیوں نہیں کی جاتی؟
سوال ہونا چاہئے مرکزی رویت ہلال کمیٹی سے۔۔۔کہ آپ نے اب تک اس فتنے کے خلاف عدالت کا دروازہ کیوں نہیں کھٹکھٹایا؟

*حکومت سے*
سوال ہونا چاہئے حکومت سے ۔۔۔ کہ جس وقت مسجد قاسم خان کا مفتی کار سرکار میں مداخلت کر رہا ہوتا ہے اس وقت حکومت کی رٹ کہاں ہوتی ہے؟
سوال ہونا چاہئے حکومت سے ۔۔۔ کہ ایک شخص برس ہا برس سے ریاست کے اندر ریاست بنائے بیٹھا ہے، حکومت کب جاگے گی ؟
سوال ہونا چاہئے حکومت سے ۔۔۔ کہ حکومت کیوں مسجد قاسم خان کے مفتی کے خلاف قانونی کاروائی نہیں کرتی؟ کیوں ایکشن نہیں لیتی؟
سوال ہونا چاہئے حکومت سے ۔۔۔ کہ ایسے مواقع پر کیوں اس فتنے کو ڈھیل دی جاتی ہے؟ کیوں اس فتنے سے آنکھ چرائی جاتی ہے؟
سوال ہونا چاہئے حکومت سے ۔۔۔کہ اگر قانونی کاروائی ممکن نہیں تو کم از کم ایسے مواقع پر اس فتنے کو دو تین دن کے لئے نظربند کیوں نہیں کر دیا جاتا؟ کیوں اس کا موبائل نہیں چھین لیا جاتا؟ کیوں اس کو ملک سے باہر نہیں بھیج دیا جاتا؟
سوال ہونا چاہئے حکومت سے ۔۔۔کہ کیوں ایسے مواقع پر دفعہ ۱۴۴ کا استعمال نہیں کیا جاتا؟ کیوں اس کے گرد جمع ہونے والے جمگھٹے کو منتشر نہیں کر دیا جاتا؟

*میڈیا صحافیوں اور ٹی وی چینلز سے*
سوال ہونا چاہئے میڈیا صحافیوں اور ٹی وی چینلز سے ۔۔۔ کہ آپ ایک غیر اہم شخص کو کیوں اتنی اہمیت دیتے ہیں؟ کیوں اتنی کوریج دیتے ہیں؟
سوال ہونا چاہئے میڈیا صحافیوں اور ٹی وی چینلز سے ۔۔۔ کہ آپ باقی دس چاند کی رویت کے وقت مسجد قاسم خان کے مفتی کو کیوں بھول جاتے ہیں؟
سوال ہونا چاہئے میڈیا صحافیوں اور ٹی وی چینلز سے ۔۔۔ کہ آپ باقی دس چاند کی رویت کے وقت مسجد قاسم خان کے مفتی کو کیوں نہیں پکڑتے کہ آؤ ناں مفتی صاب اب چاند دکھاؤ ۔ محرم کا چاند دکھاؤ۔ ربیع الاول کا چاند دکھاؤ۔ ذی الحج کا چاند دکھاؤ؟

*پیمرا سے*
سوال ہونا چاہئے پیمرا سے۔۔۔ کہ ایک شخص کار سرکار میں مداخلت کر رہا ہوتا ہے، تو اس کے گرد جمع ہونے والے ٹی وی چینلز اور رپورٹرز کے لئے پیمرا کی پالیسی کیا ہے؟
سوال ہونا چاہئے پیمرا سے۔۔۔ ایسے فتنے کو خواہ مخواہ اہمیت دینے والے ٹی وی چینلز اور رپورٹرز کے لئے پیمرا کے قوانین کیا کہتے ہیں؟
سوال ہونا چاہئے پیمرا سے۔۔۔ اس بارے میں پیمرا کا ضابطہ اخلاق کیا ہے؟ اور اگر کوئی نہیں ہے تو ضابطہ اخلاق کیوں نہیں تیار کر لیا جاتا؟
سوال ہونا چاہئے پیمرا سے۔۔۔ کہ جس طرح گزشتہ برسوں میں رمضان المبارک میں فضول گیم شوز پر پابندی کا حکم جاری کیا، ، کیوں اس فتنے کی رپورٹنگ پر پابندی کا حکم جاری نہیں کیا جاتا؟

*معاصر علمائے کرام سے*
سوال ہونا چاہئے معاصر علمائے کرام سے۔۔۔کہ آپ حضرات مسجد قاسم خان کے مفتی کو کیوں نہیں سمجھاتے کہ وہ امت میں تفرقہ و انتشار کا سبب بن رہا ہے؟
سوال ہونا چاہئے معاصر علمائے کرام سے۔۔۔کہ آپ حضرات اس فتنے کے خلاف کیوں آواز بلند نہیں کرتے؟
سوال ہونا چاہئے معاصر علمائے کرام سے۔۔۔ کہ آپ حضرات نے اب تک اس فتنے کی سرکوبی کے لئے کیا اقدامات کئے؟
سوال ہونا چاہئے معاصر علمائے کرام سے۔۔۔کہ آپ حضرات نے اب تک مسجد قاسم خان کے مفتی کا گریبان کیوں نہیں پکڑا؟
سوال ہونا چاہئے معاصر علمائے کرام سے۔۔۔کہ آپ حضرات کیوں اس فتنے کی مذمت نہیں کرتے؟ کیوں اس کے خلاف واشگاف الفاظ میں ہم آواز ہو کر برات کا اعلان نہیں کرتے؟

*عدلیہ سے*
سوال ہونا چاہئے عدلیہ سے۔۔۔ کہ ایک شخص برس ہا برس سے پورے ملک میں تفرقہ و انتشار کا سبب بن رہا ہے۔۔۔ برس ہا برس سے مسلسل حکومت اور اداروں کے خلاف چل رہا ہے ۔۔۔ برس ہا برس سے عوام الناس کو حکومتی اداروں کے خلاف بلا وجہ بھڑکا رہا ہے۔۔۔ اسلامی جمہوریہ پاکستان میں مسلمانوں کے روزے اور عیدیں برس ہا برس سے خراب کرا رہا ہے ۔۔۔ معزز عدالت کیوں اس فتنے کے خلاف سوموٹو ایکشن نہیں لیتی؟
سوال ہونا چاہئے کہ معزز عدالت کیوں مسجد قاسم خان کے مفتی کو عدالت میں طلب نہیں کرتی؟

سوال ہونا چاہئے کہ معزز عدالت کیوں اس کے خلاف احکامات جاری نہیں کرتی؟

سوال ہونا چاہئے کہ معزز عدالت کیوں اس کو پابند سلاسل نہیں کرتی؟

سوال ہونا چاہئے کہ معزز عدالت کیوں اس کو پھانسی کی سزا نہیں سناتی؟

*عوام الناس سے*
سوال ہونا چاہئے عوام الناس سے۔۔۔ کہ اے مسلمانو! تم کیوں اس شخص کی پیروی کرتے ہو جس نے امت کو تفرقہ میں ڈال رکھا ہے؟

سوال ہونا چاہئے عوام الناس سے۔۔۔ کہ جب حکومت نے ایک ادارہ بنایا ہوا ہے جو درست کام کر رہا ہے ، اور جس پر بڑے بڑے علمائے وقت کو اعتماد ہے ، مفتی تقی عثمانی و مفتی رفیع عثمانی ایسے اکابرین وقت جس کی رویت کے مطابق روزے عید کرتے ہیں ، اے پاکستان کے ایک خطہ کی عوام! تم کیوں اس ادارے سے انحراف کرتے ہو؟ کیوں اپنے روزے عید برباد کرتے ہو؟
سوال ہونا چاہئے عوام الناس سے۔۔۔کہ کیا تمہیں نہیں پتہ کہ سعودی عرب میں بھی رویت ہلال میں خطا یا غلطی ہو جاتی ہے، یا ہو چکی ہے، ذی الحج کی رویت میں خطا ہو چکی ہے، تو ایسا ہو جانے کے باوجودوہاں کے علمائے کرام نے کبھی حکومت کے خلاف علم بغاوت بلند نہیں کیا۔۔۔ بلکہ حج بھی درست قرار پایا اور روزے کی قضا بھی کر لی۔۔۔ اے پاکستان کے ایک خطہ کی عوام ! حکومت نے ادارہ بنایا ہوا ہے ۔۔۔ اگر وہ کوئی غفلت کرتے ہیں تو گناہ ثواب ان کے ذمہ ۔۔۔ اور اللہ کے فضل سے آج تک کوئی غفلت ثابت بھی نہیں ہوئی ، پھر کیوں اس ادارے پر اعتماد نہیں کرتے؟

*اللہ رب العزت کی بارگاہ میں۔۔۔*
اے اللہ! مفتی پوپلزئی نے تیری امت میں تفرقہ ڈال رکھا ہے۔ ۔۔تیری امت میں اختلاف و انتشار کا سبب بنا ہوا ہے ۔۔۔ تیرے مسلمان بندوں کے روزے عیدیں خراب کرا رہا ہے۔۔۔ حکومت وقت کے خلاف خروج کئے ہوئے ہے۔۔۔ حکومت وقت کے خلاف علم بغاوت بلند کئے ہوئے ہے۔۔۔
اے اللہ ! تو قرآن میں کہتا ہے الفتنۃ اشد من القتل۔۔۔ کہ فتنہ و فساد قتل و غارت گری سے بھی زیادہ برا ہے۔۔۔
اے اللہ! تو قرآن میں کہتا ہے کہ و اذا قیل لھم لا تفسدوا فی الارض قالو انما نحن مصلحون۔۔۔ الا انھم ھم المفسدون ولٰکن لا یشعرون ۔۔۔
اے اللہ! یہ شخص خود کو مفتی کہلواتا ہے۔۔۔ لیکن یہ بھی اصلاح کے نام پر فتنہ فساد کا سبب بنا ہوا ہے۔۔۔
اے اللہ ! اس کو ہدایت عطا فرما۔۔۔ اور اگر اس کے مقدر میں ہدایت نہیں ہے تو پھر پاکستان کے مسلمانوں کو اس فتنے سے ہمیشہ کے لئے محفوظ فرمادے۔۔۔
اے اللہ ! تو اس کو مفسدین میں شمار کرتے ہوئے اس کے انجام تک پہنچا دے۔
آمین

Behaviors & Attitudes, Social

Performance

کارکردگی

کل یوٹیلیٹی اسٹور کے پاس سے گزر ہوا۔

حالت زار پہ سخت افسوس ہوا۔

کوئی ویرانی سی ویرانی تھی۔

ایک طرف نجی شعبے کے تحت چلنے والی امتیاز سپر مارکیٹ ہے۔۔۔

جس کے شیلف بلامبالغہ ہزاروں ملکی و غیر ملکی اشیاء سے لدے ہوئے نظر آتے ہیں۔۔۔

  جہاں تقریباً تمام اشیاء موجود ہوتی ہیں۔۔۔

جہاں خریداروں کی اتنی بھرمار نظر آتی ہے کہ اکثر اوقات تو ٹرالی چلانے کو بھی جگہ نہیں ملتی۔۔۔

بلکہ کبھی کبھی تو ٹرالی ہی  دستیاب نہیں ہوتی۔۔۔

نجی ادارہ ہونے کے باوجود خریداری پر صارفین کو اچھی خاصی رعایت دی جاتی ہے۔۔۔

صرف امتیاز ہی کیا۔۔۔

چیز اپ کو دیکھ لیں۔۔۔

بلکہ ناہید، اور ہائپر اسٹار اور میٹرو۔۔۔

کیا کیا گِنوایا جائے۔۔۔؟

اور دوسری جانب حکومت کے تحت چلنے والے یوٹیلیٹی اسٹور۔۔۔

یاسیت کا شکار۔۔۔!

اسٹور گاہکوں سے خالی ۔۔۔

اور اسٹور کے شیلف اشیائے صرف سے خالی۔۔۔

یہاں ہجوم صرف اسی وقت نظر آتا ہے جب چینی یا کوکنگ آئل وغیرہ کی قلت ہو جائے۔۔۔

(جن کی قلت کی ذمہ دار بھی خود حکومت ہی ہوتی ہے)

ورنہ کوئی قریب نہیں پھٹکتا۔۔۔

سمجھ نہیں آتا کہ حکومتی انتظام و انصرام کے تحت چلنے والے ادارے کیوں زبوں حالی کا شکار ہیں۔

حکومت… جس کے پاس قانون سازی سے لے کر وسائل تک ہر چیز کی بھرمار ہوا کرتی ہے۔۔۔

جبکہ ان کے مقابل پرائیویٹ ادارے خوب چل رہے ہیں اور ترقی کر رہے ہیں۔۔۔۔

آپ اسٹیل مل کو دیکھ لیجئے کہاں سے کہاں پہنچ گئی جبکہ نجی اسٹیل ملیں کہاں سے کہاں پہنچ گئیں۔۔۔

پوسٹ آفس کا موازنہ نجی کوریئر سروس ٹی سی ایس سے کر لیجئے۔۔۔

ریلوے میں ساری ٹرینیں ایک طرف اور پٹے پر دی جانے والی گرین لائنز اور بزنس ٹرین دوسری طرف۔۔۔

پی آئی اے کو کہاں سے کہاں پہنچا دیا۔۔۔

سی ڈی اے اور کے ڈی اے بمقابلہ بحریہ ٹاؤن و ڈی ایچ اے۔۔۔۔

علیٰ ھذا القیاس۔۔۔

ناطقہ سر بگریباں ہے اسے کیا کہئے