Behaviors & Attitudes, Emaan, Eman, Hajj Umrah, Uncategorized, معاشرت, امر بالمعروف و نہی عن المنکر, اخلاقیات, حج, حسن معاشرت, علم دین, عمرہ

حج کی حفاظت۔2

*اپنے حج کی خوب حفاظت کیجیے* 2

بعض حاجیوں کو دیکھا کہ اگر حرم شریف میں چپل گم ہو گئی تو باہر پڑی کوئی بھی چپل پہن کر چل دیئے۔ صرف اسی پر بس نہیں بلکہ بعضے تو دوسروں کو بھی ایسا کرنے کا مشورہ دیتے ہیں۔

ہمارے خیال میں تو ایسا کرنا کسی طور بھی مناسب نہیں۔ ایک تو یہ چپل چوری میں شمار ہو گا، دوم کسی مسلمان کی دل آزاری کا سبب ہو گا۔ اور بھی کئی قباحتیں ہیں۔

چپل غائب ہونے پر یقیناً رنج تو بہت ہوتا ہے لیکن ایک تو چپل اٹھانے والے کو اللہ کی رضا کے لیے فوراً معاف کر دینا چاہیے ۔ دوسرا یہ کہ باہر کا فرش بہت زیادہ گرم نہ ہو تو ننگے پیر جا کے ورنہ بصورت دیگر کسی ساتھی سے چپل مستعار لے کے یا ساتھی کو بھیج کے قریبی دوکان سے چپل خرید لینی چاہیے۔

یقیناً یہ بھی خاصا تکلیف دہ مرحلہ ہے۔ پانچ دس ریال بھی خرچ ہو سکتے ہیں لیکن بہرحال کسی اور کی چپل اٹھانے کی صورت میں خدانخواستہ  آخرت میں پھنسنے سے کہیں بہتر ہے۔حج الگ خراب ہو گا۔

محتاط رہئے۔ اپنے حج کی خوب حفاظت کیجئے۔

Behaviors & Attitudes, Emaan, Eman, Hajj Umrah, Social, Uncategorized, معاشرت, امر بالمعروف و نہی عن المنکر, اسلام, حج, حسن معاشرت, علم دین, عمرہ

حج کی حفاظت۔1

*اپنے حج کی حفاظت کیجیے*

  اللہ رب العزت نے ۲۰۰۲ میں حج کی سعادت عطا فرمائی۔

 اس وقت دو حج اسکیمز ہوتی تھیں۔ گورنمنٹ اور اسپانسر شپ۔

ہم نے اسپانسرشپ اسکیم کے تحت نیشنل بینک میں درخواست جمع کرائی۔ بینک کے ایک ملازم نے عبد الغنی نامی ایک صاحب  کا پتہ دیا جو حجاج کے لیے رہائش کا انتظام کرتے تھے۔

ان سے ملے۔ وہ مکہ کی رہائش کے 1600 ریال مانگ رہے تھے۔ ہماری خواہش تھی کہ 1500 ریال میں معاملہ نمٹ جائے۔ ( بینک اکاؤنٹ بالکل خالی ہو چکا تھا)۔ خاصی بحث و تکرار کے بعد طے پایا کہ 1500 ریال ابھی جمع کرا دیں۔۔۔ بقیہ 100 ریال مکہ مکرمہ پہنچ کر ادا کر دیجیے گا۔ ہم نے 1500 ریال ادا کر دیئے۔

مکہ مکرمہ پہنچنے کے بعد عبد الغنی صاحب ہاتھ ہی نہ آئے۔ یہاں تک کہ حج بھی گزر گیا۔ حج کے بعد عبد الغنی صاحب نے حجاج کرام کی ضیافت کی۔ اس دن وہ موجود تھے۔ میں نے اپنے ایک ساتھی کو یاد دلایا کہ بھائی ان کے 100 ریال ادا کر دیتے ہیں۔ اس نے میرا ہاتھ دبایا کہ چھوڑو کیا ضرورت ہے یاد دلانے کی۔ میں نے کہا: بھائی ہمیں 100 ریال کے پیچھے اپنا حج برباد نہیں کرنا چاہیے۔ بات اس کے بھی دل کو لگی۔

جا کے عبد الغنی صاحب سے ملے اور یاد دلایا کہ آپ کے 100 ریال باقی تھے۔

اللہ نے ان کا دل نرم کر دیا۔

بولے: ارے چھوڑیئے۔۔۔ خیر ہے۔۔۔ کوئی بات نہیں۔ بس۔۔۔ ہو گیا سب۔
اللہ اکبر۔۔۔

اللہ رب العزت نے ہمارا حج بھی خراب نہیں ہونے دیا اور ہمارے 100 ریال بھی بچا لیے۔ فللہ الحمد۔

سب تعریف اللہ ہی کے لیے ہے جس کی عطا کردہ توفیق سے یہ ممکن ہوا۔ ہمارا کوئی کمال نہیں۔

معزز عازمین حج

ذکر کرنے کا مقصد یہ تھا کہ حج پہ شیطان بہت چوکس ہوتا ہے۔ مقابلے میں حاجی کو بھی بہت چوکس اور محتاط رہنے کی ضرورت ہے۔ چند برس قبل ایک صاحب گورنمنٹ پیکج پہ گئے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ کھانے میں ہر حاجی کے لیے دہی کا ایک پیکٹ یا ایک کیلا یا ایک سیب مختص ہوتا ہے۔ بعض حاجی ایک کے بجائے دو دو اٹھا لیتے۔۔۔ پیچھے کئی حاجی محروم رہ جاتے۔

ایسے ہی بند کمروں میں سگریٹ پینا ساتھی حاجیوں کے لیے سخت آزار کا باعث ہوتا ہے۔ محتاط رہیے! اپنے حج کی خوب حفاظت کیجیے۔

Behaviors & Attitudes, Emaan, Eman, Hajj Umrah, Namaz, Social, Uncategorized, معاشرت, اخلاقیات, اسلام, حج, حسن معاشرت, حسن سلوک, عمرہ

عربوں کی چند خوبیاں

عربوں کی چند خوبیاں

بعض حجاج کرام عرب باشندوں کے درشت رویہ کی شکایت کرتے نظر آتے ہیں۔ میں نے عربوں میں اس کے بر خلاف چند خوبیاں بھی دیکھیں۔ ان خوبیوں کو اپنانے کی کوشش بھی کی۔

 خوبی نمبر 1: نمازوں کی پابندی

 خوبی نمبر 2 : نماز کے وقت دوکان کاروبار بند

 خوبی نمر 3 : مسواک

خوبی نمبر 4: دو رکعت نماز تحیة المسجد کا التزام

 خوبی نمبر 5: قرآن کی تلاوت

 خوبی نمبر 6: پیر جمعرات کے روزہ کا اہتمام

 خوبی نمبر 7: افطار کے وقت دسترخوان پر مہمان نوازی

 خوبی نمبر 8: حاجیوں کا اکرام

خوبی نمبر 9: منیٰ مزدلفہ عرفات میں حاجیوں کے لیے اشیائے خورد و نوش کا نچھاور کرنا

 خوبی نمبر 10: حاجیوں کو روڈ کراس کرتے دیکھ کر گاڑی روک دینا

آپ بھی چاہیں تو ان خوبیوں کو اپنا سکتے ہیں۔ اپنی خامیوں پر نظر رکھئے اور دوسروں کی خوبیوں پر۔

Behaviors & Attitudes, Pakistan, Social, Uncategorized, پاکستان, حسن معاشرت

IDEAS

 

Do they know…There exists the “Civic Center?” Do they know… How many offices are situated there? #KDA! #HBFC! #KBCA! #ExciseAndTaxationDept! #KElectric! #PostOffice! #Banks! #SSGC offices! #DCoffice!

Do they know… How many employees work at these offices? Do they know… how many citizens daily visit these offices?

Do they know… there exist two of the largest medical institutions of Pakistan? #LNH! #AKU!

Do they know… how many #Doctors and paramedical staff work there?
Do they see… hear… The #Ambulances… and the #hooters… and the #patients…?

Do they know… the disturbance created cuz of this mess?
And that too for 4 whole working days!
:@
#Ideas2016

 

Behaviors & Attitudes, Social, Uncategorized, حسن معاشرت

Whatsapp Bombardment

واٹس ایپ بمباری

۔  دیکھئے! یہ جو واٹس ایپ ہے ناں… یہ پیغام رسانی کا ایک بہت اچھا اور نافع ذریعہ ہے… لیکن اس کا استعمال ایسے کرنا چاہیے کہ موصول کنندہ آپ کے بے وقت پیغامات سے عاجز نہ آ جائے…

 

۔  دیکھئے! “صبح بخیر” کا ایک میسج ایک صبح کے لیے پوری کفایت کر دیتا ہے… سو صبح بخیر کے میسیجز کی دس بیس گولیاں چلانے کی چنداں ضرورت نہیں… وہ بھی صبح صادق کے وقت۔۔۔

 

۔  دیکھئے! جمعہ کی مبارکباد دینا شریعت سے ثابت نہیں… تاہم اگر آپ پھر بھی مبارکباد دینے پر مصر ہیں تو فی جمعہ ایک میسج کافی ہے… کیا ضرورت ہے جمعہ کے دن مبارکبادوں کا پورا برسٹ مارنے کی۔۔۔

 

۔  دیکھئے! اگر کسی وجہ سے آپ کو رات بھر نیند نہیں آتی… یا اللہ کے فضل و کرم سے آپ منہ اندھیرے تہجد کے لیے جاگ جاتے ہیں… تو اس کا یہ مطلب نہیں کہ باقی دنیا بھی آپ کے ساتھ ساتھ جاگ جاتی ہے یا دنیا کو آپ کے ساتھ ساتھ جاگ جانا چاہئے… نہ ہی یہ مطلوب ہے کہ واٹس ایپ کو کلاشنکوف کی طرح استعمال کر کے سارے عالم کو تہجد کے لیے جگایا جائے… جن کو تہجد یا فجر کی نماز کی فکر ہوتی ہے وہ اپنے جاگنے کا خود اہتمام کر لیتے ہیں… موبائل فون میں الارم بھی ہوتا ہے ناں؟

۔  دیکھئے! احادیث کی کتابوں میں یہ روایت ملتی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب تہجد کیلئے بیدار ہوتے تو بستر سے آہستہ اٹھتے اور نہایت آہستہ سے دروازہ کھولتے تھے ایسا اس لئے کرتے کہ اماں عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کی نیند میں خلل نہ آئے،

(مسلم:۲/۳۱۳)

 

دیکھئے! اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم اپنی زوجہ مطہرہ کے آرام کا کس درجہ خیال رکھ رہے ہیں جو کہ اسی حجرہ مبارک بلکہ اسی بستر مبارک میں محو استراحت ہیں… اور آپ… اپنے سے میلوں دور بیٹھے احباب پر واٹس ایپ کی بمباری کر رہے ہوتے ہیں… آپ کو کچھ خبر بھی ہے کون کس وقت سویا رات کو۔۔۔

 

دیکھئے! یہ جو موبائل فون ہے ناں… یہ آپس کے رابطوں کا بہترین ذریعہ ہے… اور اکثر لوگ اپنا موبائل فون چوبیس گھنٹے آن رکھتے ہیں… اب آپ کی میسج بمباری کے باعث نیند خراب ہونے کے خوف سے کوئی اپنا فون رات سوتے وقت آف یا سائلنٹ کر لیتا ہے… اور صبح کو اسے پتہ چلتا ہے کہ رات انتہائی ایمرجنسی میں کسی نے اسے کال کی… لیکن موبائل آف یا سائلنٹ ہونے کے سبب وہ کال ریسیو نہیں کر سکا… بروقت مدد کو نہیں پہنچ سکا… تو اس کا ذمہ دار کون ہو گا۔۔۔ 
آپ… صرف آپ۔۔۔

 

کچھ تو خیال کیجیے محترم۔۔۔

Behaviors & Attitudes, Sahaba kay Waqiat, Social, Uncategorized, پاکستان, اخلاقیات, اسلام, حسن سلوک

Qatra Qatra Darya

قطرہ قطرہ دریا

“دس روپے پھینکنا پسند کریں گے آپ?”

“ہرگز نہیں…”

“مرضی ہے آپ کی… ورنہ اس سے زیادہ ہی پھینک دیتا ہے ہر کوئی… کبھی ہفتے میں… کبھی مہینے میں… وہ بھی جانتے بوجھتے…”

“کوئی نہیں… جانتے بوجھتے کون پھینکے گا بھلا?”

“پھینکتے ہیں جناب… آپ بھی پھینکتے ہیں… آپ نے بھی بارہا پھینکے ہیں…”

“کب پھینکے میں نے?”

“تین روپے تو ابھی چند منٹ پہلے پھینک کے آ رہے ہیں آپ!”

“ہیں! کہاں?”

“سی این جی بھروائی تھی ناں ابھی آپ نے اپنی گاڑی میں? چار سو سینتیس روپے کی سی این جی آئی تھی… سی این جی پمپ والے نے چار سو چالیس روپے لیے… آپ نے بھی اعتراض کیا نہ تین روپے واپسی کا تقاضا… تین روپے پھینکے آپ نے جانتے بوجھتے کہ نہیں?”

“اوہ… اچھا… ہاں…”

“اور ایسا آپ ہر دوسرے دن کر رہے ہوتے ہیں… کبھی روپیہ کبھی دو روپے کبھی تین روپے… ہفتے دو ہفتے میں دس بیس روپے صرف سی این جی اسٹیشن پر  پھینک دیئے…”

“ہاں یار یہ تو کبھی خیال ہی نہیں کیا میں نے… “

“جی بھائی صاحب! کوئی خیال نہیں کرتا…
اور یاد دلائوں! وہ پرسوں پلے روز جو آپ کے ماموں نے ریمیٹنس بھیجی تھی امریکہ سے 23 ہزار بتیس روپے… کیشئر نے آپ کو کتنے دیئے?”

“23 ہزار تیس روپے…”

“دو روپے وہاں بینک میں پھینک آئے آپ…”

“ٹھیک کہہ رہے ہو بھائی!”

“جی جناب ہم لوگ خیال نہیں کرتے ورنہ جوتا لینے جائیے تو قیمت 2499 روپے… دیئے کتنے? 2500… چپل 799 کی, دیئے 800… موبائل کارڈ 599 کا, دوکاندار نے وصول لیے 600…”

“اوہ بھائی یہ کیا گورکھ دھندہ لے بیٹھے… واقعی کتنے پیسے پھینک دیتے ہیں ہم… کبھی غور ہی نہیں کیا!”

“جی ی ی ی! اب بتائیے دس  روپے پھینکنا پسند کریں گے آپ? جانتے بوجھتے?”

“مگر کہاں?”

“چیف جسٹس کے ڈیم فنڈ میں!”

“دس روپے سے کیا ہو گا?”

“کیوں نہیں ہو گا… ایک چھٹانک لوہا تو آ ہی جائے گا… یا دس بیس گرام سیمنٹ… یا ایک مٹھی بجری… یا ڈیم پر کام کرنے والے مزدور کی ایک روٹی… کچھ نہ کچھ تو ہو رہے گا… قطرہ قطرہ ہی دریا بنتا ہے… دیکھئے ۲۲ کروڑ کی آبادی ہے پاکستان کی۔۔۔ اگر ہر فرد دس روپے  روز بھی دے ناں ڈیم فنڈ میں ۔۔۔ تو ایک دن میں دو سو بیس کروڑ روپے جمع ہو سکتے ہیں، یعنی دو ارب بیس کروڑ روپے۔۔۔ دس دن میں بائیس ارب، اور سو دن میں دو سو بیس ارب روپے۔۔۔ یوں ہم سب پاکستانی مل کے  سال بھر میں آٹھ سو ارب روپے جمع کر سکتے ہیں  “

“مگر ان لوگوں کا کوئی بھروسہ نہیں… لے کے ڈکار جائیں…”

“تو آپ کی کون سی قرقی ہو جانی ہے دس روپے سے… آپ نیک نیتی سے دے دیجئے… سوچئیے اگر واقعی ڈیم بن گیا تو… نسلیں دعائیں دیں گی ان شآء اللہ… صدقہ جاریہ ہے صدقہ جاریہ… رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی ایک حدیث کے مطابق موٴمن کے عمل اور اس کی نیکیوں میں سے جس کا ثواب موٴمن کو اس کے مرنے کے بعد پہنچتا رہتا ہے ان میں سے ایک ہے نہر جاری کرنا… اسی طرح ایک مرتبہ ایک صحابیؓ کے دریافت کرنے پر کہ کون سا صدقہ افضل ہے… اپؐ نے فرمایا: پانی پلانا.”

“سبحان اللہ!”

“دیکھئے اللہ تعالی نے ہمیں فقط کوشش کرنے کو کہا ہے… نتائج نہیں مانگے… آپ اخلاص کے ساتھ دے دیجئے… اپنے حصے کا ثواب جھپٹ لیجئے… آپ کی قبر میں ان شآء اللہ سیلاب آ جائے گا اجر و ثواب کا, سیلاب… بڑا نادر موقع ہے اور بہت معمولی رقم… چلیں اپنا موبائل نکالئے اور DAM لکھ کر 8000 پر میسج بھیج دیجئے… اور اپنے احباب کو بھی اس نیکی پر اکسائیے… جزاک اللہ خیراً کثیراً

Behaviors & Attitudes, media, Pakistan, Politics, Social, Uncategorized, پاکستان, اخلاقیات

Media ki Makhi

میڈیا کی مٙکھی

اشفاق احمد لکھتے ہیں…
میں نے تائے سے کہا: تایا سن میں تمہیں ایک کام کی بات بتاتا ہوں – وہ بڑے تجسس سے میری طرف دیکھنے لگا – میں نے اسے بتایا کہ یہ جو مکھی ہوتی ہے اور جسے معمولی اور بہت حقیر خیال کیا جاتا ہے یہ دیکھنے اور بینائی کے معاملے مین تمام کیڑوں سے تیز ہوتی ہے کیونکہ اس کی آنکھوں میں تین ہزار محدب شیشے یا لینز لگے ہوتے ہیں اور یہ ہر زاویے سے دیکھ سکتی ہے – اور یہی وجہ ہوتی ہے کہ جب بھی اور جس طریقے سے بھی اس پر حملہ آور ہوں ، یہ اڑ جاتی ہے – اور اللہ نے اسے یہ بہت بڑی اور نمایاں خصوصیت دی ہے –

اب میں سمجھ رہا تھا کہ اس بات کا تائے پر بہت رعب پڑے گا کیونکہ میرے خیال میں یہ بڑے کمال کی بات تھی لیکن تایا کہنے لگا:

” لکھ لعنت ایسی مکھی تے جندیان تن ہزار اکھاں ہوون او جدوں وی بہندی ائے گندگی تے بہندی ائے “

(ایسی مکھی پر لعنت بیشمار ہو جس کی تین ہزار آنکھیں ہوں اور وہ جب بھی بیٹھے گندگی پر ہی بیٹھے)

آج کل میڈیا جس رویہ کا مظاہرہ کر رہا ہے یہ مثال اس پر بالکل فٹ بیٹھتی ہے… تین ہزار محدب عدسوں کی مانند ایچ ڈی کیمرے… لیکن اصل ایشوز کے بجائے نان ایشوز پر گھنٹوں کے مباحثے اور ٹاک شوز…
تف ہے ایسے میڈیا پر…