Behaviors & Attitudes, Sahaba kay Waqiat, Social, Uncategorized, پاکستان, اخلاقیات, اسلام, حسن سلوک

Qatra Qatra Darya

قطرہ قطرہ دریا

“دس روپے پھینکنا پسند کریں گے آپ?”

“ہرگز نہیں…”

“مرضی ہے آپ کی… ورنہ اس سے زیادہ ہی پھینک دیتا ہے ہر کوئی… کبھی ہفتے میں… کبھی مہینے میں… وہ بھی جانتے بوجھتے…”

“کوئی نہیں… جانتے بوجھتے کون پھینکے گا بھلا?”

“پھینکتے ہیں جناب… آپ بھی پھینکتے ہیں… آپ نے بھی بارہا پھینکے ہیں…”

“کب پھینکے میں نے?”

“تین روپے تو ابھی چند منٹ پہلے پھینک کے آ رہے ہیں آپ!”

“ہیں! کہاں?”

“سی این جی بھروائی تھی ناں ابھی آپ نے اپنی گاڑی میں? چار سو سینتیس روپے کی سی این جی آئی تھی… سی این جی پمپ والے نے چار سو چالیس روپے لیے… آپ نے بھی اعتراض کیا نہ تین روپے واپسی کا تقاضا… تین روپے پھینکے آپ نے جانتے بوجھتے کہ نہیں?”

“اوہ… اچھا… ہاں…”

“اور ایسا آپ ہر دوسرے دن کر رہے ہوتے ہیں… کبھی روپیہ کبھی دو روپے کبھی تین روپے… ہفتے دو ہفتے میں دس بیس روپے صرف سی این جی اسٹیشن پر  پھینک دیئے…”

“ہاں یار یہ تو کبھی خیال ہی نہیں کیا میں نے… “

“جی بھائی صاحب! کوئی خیال نہیں کرتا…
اور یاد دلائوں! وہ پرسوں پلے روز جو آپ کے ماموں نے ریمیٹنس بھیجی تھی امریکہ سے 23 ہزار بتیس روپے… کیشئر نے آپ کو کتنے دیئے?”

“23 ہزار تیس روپے…”

“دو روپے وہاں بینک میں پھینک آئے آپ…”

“ٹھیک کہہ رہے ہو بھائی!”

“جی جناب ہم لوگ خیال نہیں کرتے ورنہ جوتا لینے جائیے تو قیمت 2499 روپے… دیئے کتنے? 2500… چپل 799 کی, دیئے 800… موبائل کارڈ 599 کا, دوکاندار نے وصول لیے 600…”

“اوہ بھائی یہ کیا گورکھ دھندہ لے بیٹھے… واقعی کتنے پیسے پھینک دیتے ہیں ہم… کبھی غور ہی نہیں کیا!”

“جی ی ی ی! اب بتائیے دس  روپے پھینکنا پسند کریں گے آپ? جانتے بوجھتے?”

“مگر کہاں?”

“چیف جسٹس کے ڈیم فنڈ میں!”

“دس روپے سے کیا ہو گا?”

“کیوں نہیں ہو گا… ایک چھٹانک لوہا تو آ ہی جائے گا… یا دس بیس گرام سیمنٹ… یا ایک مٹھی بجری… یا ڈیم پر کام کرنے والے مزدور کی ایک روٹی… کچھ نہ کچھ تو ہو رہے گا… قطرہ قطرہ ہی دریا بنتا ہے… دیکھئے ۲۲ کروڑ کی آبادی ہے پاکستان کی۔۔۔ اگر ہر فرد دس روپے  روز بھی دے ناں ڈیم فنڈ میں ۔۔۔ تو ایک دن میں دو سو بیس کروڑ روپے جمع ہو سکتے ہیں، یعنی دو ارب بیس کروڑ روپے۔۔۔ دس دن میں بائیس ارب، اور سو دن میں دو سو بیس ارب روپے۔۔۔ یوں ہم سب پاکستانی مل کے  سال بھر میں آٹھ سو ارب روپے جمع کر سکتے ہیں  “

“مگر ان لوگوں کا کوئی بھروسہ نہیں… لے کے ڈکار جائیں…”

“تو آپ کی کون سی قرقی ہو جانی ہے دس روپے سے… آپ نیک نیتی سے دے دیجئے… سوچئیے اگر واقعی ڈیم بن گیا تو… نسلیں دعائیں دیں گی ان شآء اللہ… صدقہ جاریہ ہے صدقہ جاریہ… رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی ایک حدیث کے مطابق موٴمن کے عمل اور اس کی نیکیوں میں سے جس کا ثواب موٴمن کو اس کے مرنے کے بعد پہنچتا رہتا ہے ان میں سے ایک ہے نہر جاری کرنا… اسی طرح ایک مرتبہ ایک صحابیؓ کے دریافت کرنے پر کہ کون سا صدقہ افضل ہے… اپؐ نے فرمایا: پانی پلانا.”

“سبحان اللہ!”

“دیکھئے اللہ تعالی نے ہمیں فقط کوشش کرنے کو کہا ہے… نتائج نہیں مانگے… آپ اخلاص کے ساتھ دے دیجئے… اپنے حصے کا ثواب جھپٹ لیجئے… آپ کی قبر میں ان شآء اللہ سیلاب آ جائے گا اجر و ثواب کا, سیلاب… بڑا نادر موقع ہے اور بہت معمولی رقم… چلیں اپنا موبائل نکالئے اور DAM لکھ کر 8000 پر میسج بھیج دیجئے… اور اپنے احباب کو بھی اس نیکی پر اکسائیے… جزاک اللہ خیراً کثیراً

Advertisements
Behaviors & Attitudes, Social, اخلاقیات, حسن سلوک

NAQSH

نقش

دفتری زندگی کے بھی عجب مشاہدات و تجربات ہوتے ہیں۔ باہر کی تو بات چھوڑئیے ، محض دفتر کے اندر ہی ان گنت افراد سے واسطہ پڑتا  رہتا ہے۔ کئی لوگ آتے ہیں چلے جاتے ہیں۔ کوئی فوت ہو گیا۔کسی کا تبادلہ ہو گیا۔کوئی از خود چھوڑ گیا توکوئی ریٹائر ہو گیا ۔

پھر ان میں افسر و ماتحت  کی قید بھی ضروری نہیں کہ رویے تو سب ہی ایک دوسرے کے محسوس کر رہے ہوتے ہیں ۔  افسر کا ماتحت کے ساتھ رویہ کیسا ہے یا ماتحت کا اپنے افسر کے ساتھ، یا افسران بالا کا ماتحت افسران کے ساتھ  ۔۔۔ غرض ہر ایک کا دوسرے کے ساتھ برتاؤ دلوں پر نقش ہو رہا ہوتا ہے اور یہی برتاؤ پھر آگے چل کر تعلق کی بنیاد بنتا ہے ۔ اسی رویہ پر منحصر ہوتا ہے کہ منظر سے ہٹ جانے یا ریٹائر ، ٹرانسفر یا فوت ہو جانے کے بعد پیچھے رہ جانے والے افراد مذکورہ فرد کو کس طرح یاد کرتے ہیں۔ اور یہی برتاؤ اس بات کا بھی فیصلہ کرتا ہے کہ جانے والے سے مزید تعلق رکھنا ہے یا نہیں۔

  مجھے اپنے ادارے سے وابستہ ہوئے دو عشرے سے زائد ہو چلے ہیں۔ اس دوران بے شمار لوگ آئے اور گئے ۔  اکثر لوگ اپنے پیچھے خوشگوار یادیں چھوڑ گئے۔ چنانچہ جب کبھی انہوں نے دفتر کا چکر لگایا تو ان کی آمد پرآنکھیں چمک اٹھیں،  چہرے کھل اٹھے اور بازو وا ہو گئے۔ ان کی خوب آؤ بھگت کی گئی۔سر راہ کہیں مل گئے تو لوگوں کو ان کے ساتھ عزت و تکریم کے ساتھ پیش آتے دیکھا۔ یہ تو ان کی آمد پر معاملہ دیکھا۔ اور ان کے پیچھے کبھی ان کا ذکر چھڑ گیا تو معلوم ہوا فضا معطر ہو گئی۔ گویا یاد کرنے والوں کے لبوں سے پھول جھڑ رہے ہوں۔

اس کے برعکس چند ایسے افراد سے بھی واسطہ پڑا جو اپنے ساتھیوں کے لئے باعث آزار بنے۔ یہ بدنصیب اپنے پیچھے تلخ یادیں چھوڑ گئے۔ چنانچہ ان میں سے کبھی کوئی پلٹ کے دفتر آیا تو لوگوں کے منہ بن گئے اور ماتھے پر شکنیں ابھر آئیں۔ کچھ کو منہ چھپاتے دیکھا تو کچھ کو بحالت مجبوری ہاتھ ملاتے اور اپنی راہ لیتے دیکھا۔ کچھ کو تو بعد ازاں ہاتھ دھوتے بھی دیکھا گویا نجاست لگ گئی ہو۔ استغفراللہ۔اور اگر کبھی بھولے سے ان کا ذکر چھڑ گیا تو ایسے ایسے ملفوظات و القابات سننے کو ملے ان کی شان میں کہ الامان الحفیظ۔

حاصل کلام یہ ہے کہ آپ جس بھی شعبے سے وابستہ ہیں، اپنا جائزہ لیجئے۔ اگر اللہ رب العزت نے  آپ کو کوئی بلند مقام مرتبہ یا منصب عطا کیا ہے تو اسے محض اللہ کا فضل جانئے۔ اپنی گردن میں سریا نہ آنے دیجئے۔ اپنے ساتھیوں خاص کر ماتحتوں کے ساتھ نرم رویہ اختیار کیجئے۔ ان کی پریشانیوں میں کمی نہ کر سکتے ہوں تو ان میں اضافے کا باعث تو ہرگز نہ بنئے۔

یاد رکھئے

آپ جہاں بھی جا رہے ہیں۔۔۔

جس سے بھی مل رہے ہیں ۔۔۔

آپ کا ایک امیج ایک تاثر سامنے والے کے ذہن و دل پر نقش ہو رہا ہے۔

کوشش کیجئے کہ بھلا تاثر قائم ہو۔

کہیں ایسا نہ ہو کہ بعد ازاں کبھی آپ کا ذکر بھی آئے۔۔۔

تو لوگ ناک پر رومال رکھتے پھریں۔

دل دکھانا چھوڑیئے اور دلربا بن جائیے

آپ پتھر کیوں بنے ہیں آئینہ بن جائیے

 بادشاہی چاہئے؟ قرب الٰہی چاہئے؟

دل میں رہئے اور ہونٹوں کی دعا بن جائیے

پیاس دھرتی کی بجھے، خود سے تعلق بھی رہے

جب بلندی پر پہنچئےتو گھٹا بن جائیے

پھول بھی کھلتے رہیں غنچے گلے ملتے رہیں

باغ ہستی کے لئے موج صبا بن جائیے