ہم کیا اور ہمارا اعتکاف کیا

ہم کیا اور ہمارا اعتکاف کیا!

اعتکاف کا مقصد یہ بتایا جاتا ہے کہ بندہ رمضان المبارک کے آخری عشرے میں اللہ سے اپنے گناہوں کی مغفرت طلب کرنے کے لئے اس کے گھر کی چوکھٹ پکڑ کر بیٹھ جائے ۔ اعتکاف کی اصل روح یہ بتائی گئی ہے کہ اتنے دنوں کو خاص انقطاع الی اللہ میں گزاریں اور حتی الوسع تمام دنیاوی مشاغل بند کردئیے جائیں۔ اعتکاف کی حکمت یہ بتائی جاتی ہے کہ اس کے ذریعے بندہ دنیا سے کنارہ کش ہو جاتا ہے، دنیا اور اہل دنیا کے ساتھ مشغولیت سے بچ جاتا ہے اور اللہ کی عباد ت کے لئے فارغ ہو جاتا ہے ۔ پس اعتکاف کرنے والے کو چاہئے کہ وہ اپنے دل کو بھی اللہ کی عبادت کے لئے فارغ کر دے ۔مہربان آقا کے در پر سوالی بن کر بیٹھ جانا بہت عظیم سعادت کی بات ہے۔معتکف کو چاہئے کہ اعتکاف کے دوران قرآن مجید کی تلاوت،درود شریف، ذکر و تسبیح، دینی علم سیکھنا اور سکھانا اور انبیائے کرام علیہم السلام، صحابہ کرام اور بزرگانِ دین کے حالات پڑھنا سننا اپنا معمول رکھے، بلا ضرورت بات کرنے سے احتراز کرے۔

لیکن صاحب ہم کیا اور ہمارا اعتکاف کیا! گھر چھوڑنے کا وقت آیا تو حالت یہ تھی کہ دل بیٹھا جا رہا تھا ۔ چار و نا چار دل پر پتھر رکھ کر گھر سے نکلے اور مسجد میں ڈیرہ ڈال دیا ۔ سوچا کہ چلو اب جانے کا ارادہ کر ہی لیا ہے تو پھر یہ عبادت کریں گے، وہ عبادت کریں گے۔ لیکن صاحب عبادت تو ہم سے زیادہ ہوتی ہی نہیں۔ اسلاف کے بارے میں سنا پڑھا تھا کہ اتنے اتنے قرآن پاک کی تلاوت کر لیا کرتے تھے اور اتنے اتنے نوافل ادا کر لیا کرتے تھے ۔ آج بھی یقیناً ایسے لوگ ہوتے ہوں گے لیکن ہم … کم از کم ہمیں تو ایسے لوگوں کی فہرست میں ہرگز شمار نہ کیجئے گا۔ یقین جانئے بس تھوڑی بہت عبادت کر لی ۔ کچھ تلاوت کر لی ۔ ذرا سی شب بیداری کر لی ۔ مگرمچھ کی مانند کچھ آنسو بہا لئے ۔ بس کچھ وقت کارآمد کر لیا (اسے بھی ہماری خام خیالی ہی سمجھئے گا )، بقیہ زیادہ تر وقت تو بیکار ہی گزارا ۔

اعتکاف میں بیٹھنے والا دنیا والوں کی نگاہ میں بڑا نیک پاک عبادت گزار متقی و پرہیزگار تصور کیا جاتا ہے لیکن یہاں یہ حال کہ دن گن گن کے گزارے۔ کبھی اس کا خیال کبھی اس کا خیال۔ کبھی اس کی فکر کبھی اس کی فکر ۔ بس یہی دھن کہ جلدی سے وقت پورا ہو تو یہ پابندیاں ختم ہوں۔ یہی خیال کہ کب وہ وقت آئے گا کہ گھر جا کر بیگم سے ملیں گے، بچوں سے ملاقات کریں گے۔ اور ادھر وہ بھی شدت سے منتظر کہ کب صاحب بہادر گھر واپس لوٹیں گے ۔ سمجھ میں نہیں آتا تھا کہ اللہ تعالیٰ کو تو ہماری عبادت کی ہرگز ہرگز کوئی ضرورت نہیں، تو پھر کیوں اپنے گھر میں آنے کی سعادت بخشی گئی ؟ اور یہ بھی سمجھ نہیں آتا تھا کہ بھئی جب عبادت میں جی ہی نہیں لگ رہا تو کیوں یہاں خود کو مقید کیا ہوا ہے؟

پھر شاید قبولیت کا ہی کوئی لمحہ ہو گا کہ جب یہ عقدہ کھلا۔ کہ جنت کی حوریں بھی تو خوب سج سنور کر اپنے خاوندوں کے انتظار میں بیٹھی ہیں۔ سو جتنی شدت سے اِس گھر واپسی کا انتظار ہے ، اُس گھر واپسی کا بھی کچھ تو شوق ہونا چاہئے ۔ کتنے بکھیڑے جھمیلے خواہ مخواہ ہی بڑھا رکھے ہیں اور ان میں الجھ کر خود کو ہلکان کر رکھا ہے ورنہ بنیادی ضروریات تو بس گنتی ہی کی ہیں۔ جس طرح مسجد میں خود کو محبوس کر لیا ہے، اسی طرح دنیا میں بھی خود کو محبوس کر لیا جائے۔ جس طرح مسجد کے احترام میں فضولیات و خرافات، غیبت و یاوہ گوئی سے بچنے کا اہتمام کیا ، جس طرح مسجد میں نظر کی حفاظت کی (جی ہاں مسجد کے بھی دروازے کھڑکیاں ہوتے ہیں جن سے باہر کے مناظر نظر آ رہے ہوتے ہیں) ، جس طرح دل میں اٹھنے والے فضول خیالات اور دماغ میں برپا ہونے والی فضول سوچوں کو مسلسل جھٹک جھٹک کر دل و دماغ کو طیب و مطہر رکھنے کی شعوری کوشش کی، اسی طرح دنیا میں بھی خود کو بچانے کی کچھ کوشش کر لی جائے ۔ جس طرح بیگم سے ملاقات کے انتظار میں مسجد میں دن گن گن کر گزارے، اسی طرح جنت کی بیویوں کے انتظار میں بھی دن گن گن کے گزار لئے جائیں۔ وقت تو بہرحال گزر ہی جانا ہے اور موت برحق ہے، اور اس کے بعد کے مراحل بھی برحق ہیں۔

تو بھئی ہم تو اعتکاف میں بس یہی کچھ حاصل کر پائے ورنہ … ہم کیا اور ہمارا اعتکاف کیا!

Sa’d Bin Ma’az

sbmi

ابو شہیر

بسا اوقات ایسا ہوتا ہے کہ کوئی عبارت یا تصویر آپ کی نظروں سے گزرتی ہے اور آپ ایک لمحہ کو ٹھٹک کر رہ جاتے ہیں …  کہ وہ عبارت یا وہ تصویر آپ کو اپنے سحر میں جکڑ لیتی ہے اور آپ پہلے سوچنے … اور پھر کھوجنے پر مجبور ہو جاتے  ہیں۔ ایسی ہی ایک تصویر (پوسٹ) گزشتہ دنوں فیس بک پر نظر سے گزری جس نے راقم کو ٹھٹکنے پر مجبور کر دیا ۔ ملاحظہ کیجئے۔
sbm

مفہوم : اسلام لائے تو عمر تیس برس تھی …. اور مرے تو عمر چھتیس ۳۶ برس تھی…. اے سعد بن معاذ! چھ برس میں آپ نے ایسا کیا عمل کیا …

کہ آپ کی موت پر رحمان کا عرش جھوم اٹھا!

انتہائی پر اثر اور دل کی گہرائیوں میں اتر جانے والی اس پوسٹ کو پڑھ کر خیال آیا کہ نبی کریم ﷺ کے اس جانثار صحابی ؓ  کی زندگی کے بارے میں ذرا تاریخ کے اوراق کو کھنگالا جائے اور دیکھا جائے کہ صرف چھ برس کی اسلامی زندگی کے دوران اس نوجوان ؓ نے ایسا کیا عمل کیا کہ ان کی وفات پر عرش الٰہی خوشی سے جھوم اٹھا ۔

سیدنا سعد بن معاذ  رضی اللہ عنہ کا شمار رسول اللہ ﷺ کے انتہائی جلیل القدر صحابہ میں ہوتا ہے ۔ تعلق مدینہ منورہ (سابقہ یثرب) کے مشہور قبیلہ اوس کی شاخ بنو عبد الاشہل سے تھا ۔بعد ازاں  قبیلہ اوس کے رئیس بنے۔ ہجرت نبوی ﷺ سے ۳۲ برس قبل یثرب میں پیدا ہوئے۔ہجرت نبوی ﷺ سے ایک برس قبل اسلام قبول کیا جبکہ ہجرت کے پانچویں سال مدینۃ النبی ﷺ میں مرتبہ شہادت پر فائز ہوئے اور دیار نبی ﷺ ہی آپ کا مدفن بنا ۔ اسلام پیش کیا گیا تو سعد بن معاذ ؓ نے نہ صرف یہ کہ فوراً ہی اسلام قبول کر لیا بلکہ اپنے قبیلے والوں سےشرط باندھ لی کہ  میرا تم سب مرد و عورت سے بات کرنا حرام ہے جب تک تم مسلمان نہ ہو جاؤ۔ اس پر ان کے قبیلے کے سب مرد و زن مسلمان ہو گئے۔

حضرت سعد بن معاذ ؓ کی مختصر سی اسلامی زندگی کے اوراق پر نگاہ ڈالی جائے تو یہ بات بخوبی عیاں نظر آتی ہے کہ حضرت سعدؓ  کو جب جب موقع ملا ، انہوں نے بے مثال عزیمت و شجاعت کا مظاہر ہ کیا۔ بالخصوص غزوہ بدر اور غزوہ بنی قریظہ دو ایسے مواقع ہیں جب ان کی فہم و فراست ، دینی حمیت اور اولو العزمی حد درجہ کمال کو پہنچی نظر آتی ہے۔

سعد ؓاور معرکہ بدر

میدان بدر میں رسول اللہ ﷺ نے  ایک اعلیٰ فوجی مجلس شوریٰ میں درپیش صورتحال کی سنگینی کا تذکرہ فرماتے ہوئے کمانڈروں اور عام فوجیوں سے تبادلہ خیال کیا۔ اس موقع پر پہلے حضرت ابو بکر ؓ ، پھر حضرت عمر بن الخطاب ؓ اور پھر حضرت مقداد بن عمروؓ نے پر عزیمت کلام کیا۔ تاہم یہ تینوں کمانڈر مہاجرین میں سے تھے جن کی تعداد لشکر میں کم تھی۔ جبکہ رسول اللہ ﷺ کی خواہش تھی کہ انصار کی رائے معلوم کریں کہ وہ لشکر میں اکثریت میں تھے اور معرکے کا اصل بوجھ انہی کے شانوں پر پڑنے والا تھا۔ یہ بات حضرت سعد بن معاذ ؓ ، جو کہ انصار کے کمانڈر اور علمبردار تھے ، بھانپ گئے۔ چنانچہ انہوں نے عرض کی : بخدا ایسا معلوم ہوتا ہے اے اللہ کے رسول ﷺ کہ آپ کا روئے سخن ہماری طرف ہے۔ آپ ﷺ نے اثبات میں جواب دیا ۔ جس پر حضرت سعد ؓ یوں گویا ہوئے:

“ہم تو آپ ﷺپر ایمان لائے ہیں۔ آپ ﷺ کی تصدیق کی ہے ۔ اور یہ گواہی دی ہے کہ آپ ﷺ جو کچھ لے کر آئے ہیں سب برحق ہے اور اس پر ہم نے آپ ﷺ کو اپنی سمع و اطاعت کا عہد و میثاق دیا ہے ۔ چنانچہ اے اللہ کے رسول ﷺ! آپ کا جو ارادہ ہے اس کے لئے پیش قدمی فرمائیے۔ اس ذات کی قسم جس نے آپ کو حق کے ساتھ مبعوث فرمایا ہے اگر آپ ہمیں ساتھ لے کر اس سمندر میں بھی کودنا چاہیں تو ہم اس میں بھی آپ کے ساتھ کود پڑیں گے ۔ ہمارا ایک بھی آدمی پیچھے نہ رہے گا ۔ ہمیں قطعاً کوئی ہچکچاہٹ نہیں کہ آپ ﷺ کل ہمارے ساتھ دشمن سے ٹکرا جائیں۔ ہم جنگ میں پامرد اور لڑنے میں جواں مرد ہیں۔ اور ممکن ہے اللہ آپ ﷺ کو ہمارا وہ جوہر دکھلائے جس سے آپ کی آنکھیں ٹھنڈی ہو جائیں۔ پس آپ ہمیں ہمراہ لے کر چلیں ۔ اللہ برکت دے ۔” حضرت سعد ؓ کی یہ بات سن کر حضورﷺ بہت خوش ہوئے اور آپ ﷺ پر نشاط طاری ہو گیا ۔

معرکہ بدر برپا ہوا اور مسلمان فتحیاب رہے ۔ فتح کے بعد جس وقت مسلمانوں نے مشرکین کی گرفتاری شروع کی، رسول اللہ ﷺ چھپر میں تشریف فرما تھے اور حضرت سعد بن معاذ ؓ تلوار حمائل کئے دروازے پر پہرہ دے رہے تھے ۔ رسول اللہ ﷺ نے دیکھا کہ حضرت سعد ؓ کے چہرے پر لوگوں کی اس حرکت کا ناگوار اثر پڑ رہا ہے ۔ آپ ﷺ نے دریافت فرمایا: اے سعد! بخدا ایسا محسوس ہوتا ہے کہ تم کو مسلمانوں کا یہ کام ناگوار ہے ۔ انہوں نے کہا: جی ہاں۔ خدا کی قسم اے اللہ کے رسول ﷺ! یہ اہلِ شرک کے ساتھ پہلا معرکہ ہے جس کا موقع اللہ نے ہمیں فراہم کیا ہے ۔ اس لئے اہل شرک کو باقی چھوڑنے کے بجائے مجھے یہ بات زیادہ پسند ہے کہ انہیں خوب قتل کیا جائے اور اچھی طرح کچل دیا جائے۔

سعد ؓاور غزوہ احزب

غزوہ احد کے بعد رسول اللہ ﷺ کی ایک سال سے زائد عرصہ پر مشتمل پیہم فوجی مہمات اور کارروائیوں کے نتیجے میں جزیرۃ العرب پر ایک گونہ سکون چھا گیا تھا ۔ یہود نے جب دیکھا کہ تائید الٰہی سے حالات مسلمانوں کے حق میں سازگار ہوتے چلے جا رہے ہیں تو انہیں سخت جلن ہوئی۔ انہوں نے نئے سرے سے سازش شروع کی اور مسلمانوں پر کاری ضرب لگانے کی تیاری میں مصروف ہو گئے۔ لیکن چونکہ انہیں مسلمانوں سے براہ راست ٹکرانے کی جرات نہ تھی اس لئے انہوں نے ایک خوفناک منصوبہ ترتیب دیا۔

چنانچہ قبیلہ یہود بنو نضیر جنہیں ان کی دسیسہ کاریوں کے سبب حضور ﷺ نے مدینہ سے جلا وطن کر دیا تھا ، ان کا ایک وفد قریش مکہ کے پاس پہنچا اور انہیں رسول اللہ ﷺ کے خلاف جنگ پر آمادہ کرتے ہوئے اپنی مدد کا یقین دلایا ۔ قریش راضی ہو گئے ۔ پھر یہ وفد بنو غَطفان کے پاس پہنچا اور انہیں بھی جنگ پر آمادہ کرنے میں کامیاب رہا ۔ اسی طرح اس وفد نے دیگر قبائل عرب میں گھوم پھر کر لوگوں کو جنگ کی ترغیب دی اور ان قبائل کے بھی بہت سے افراد تیار ہو گئے ۔ یہ سارے لشکر طے شدہ پروگرام کے مطابق مدینہ پر حملہ آور ہوئے۔ کتب تاریخ کے مطابق ان سپاہ کی تعداد دس ہزار تھی ۔ حضور اقدس ﷺ کفار کی اس لشکر کشی کی اطلاع پاتے ہی مجلس شوریٰ منعقد فرمائی جس میں دفاعی منصوبہ پر صلاح مشورہ کیا۔ اہل شوریٰ نے غور و خوض کے بعد حضرت سلمان فارسی ؓ کے مشورہ پر مدینہ کے گرد خندق کھود کر مقابلہ کرنے کے مشورے کی منظوری دے دی۔ اور اہل ایمان نے نہایت مستعدی کے ساتھ چند ہی رو ز میں مطلوبہ معیار کے مطابق خندق کھود ڈالی۔

بنو قریظہ کی عہد شکنی

ایک طرف مسلمان محاذ جنگ پر سنگین مشکلات سے دوچار تھے تو دوسری جانب یہود کے سازشی عناصر اپنی سازشوں میں مصروف تھے۔ چنانچہ بنو نضیر کا مجرم اکبر حُیی بن اخطب بنو قریظہ کے پاس آیا جو کہ مدینہ میں قیام پذیر تھے اور جنہوں نے حضور ﷺ سے معاہدہ کیا تھا کہ جنگ کے مواقع پر آپ ﷺ کی مدد کریں گے ۔ حُیی نے بنو قریظہ کے سردار کعب بن اسد کو بھی عہد شکنی پر اکسایا۔ کعب نے لاکھ دامن بچانا چاہا لیکن حُیی نے اسے رام کر ہی لیا  جس کے بعد بنو قریظہ کے یہود حضور ﷺ سے کئے ہوئے معاہدے کے بر خلاف عملی طور پر جنگی کاروائیوں میں مصروف ہو گئے ۔ حضور ﷺ کو جب بنو قریظہ کی عہد شکنی کی خبر ملی تو آپ ﷺ نے تصدیق کے لئے اپنے نمائندے روانہ کئے جنہوں نے واپس آ کر بتایا کہ بنو قریظہ کی عہد شکنی کی اطلاع درست ہے۔

اُدھر مشرکین حملے کی نیت سے مدینہ کی طرف بڑھے تو خندق سے واسطہ پڑا جو ان کے اور مدینہ کے درمیان حائل تھی ۔ چنانچہ انہیں مجبوراً محاصرہ کرنا پڑا ۔ ان کا اس قسم کے دفاع سے کبھی واسطہ ہی  نہ پڑا تھا چنانچہ خندق کے گرد غیض و غضب سے چکر کاٹتے رہتے ۔ نیز فریقین کی جانب سے تیر اندازی بھی جاری رہی ۔ اسی تیر اندازی میں فریقین کے چند آدمی مارے گئے جبکہ ایک تیر حضرت سعد بن معاذ ؓ کے بھی لگا جس سے ان کے بازو کی بڑی رگ کٹ گئی ۔ سعد ؓ نے دعا کی کہ یا اللہ ! مجھے بنی قریظہ کے فیصلہ سے قبل موت نصیب نہ کر۔ (بنی قریظہ سعد کے حلیف تھے)۔ چنانچہ سعد ؓ  کا زخم مندمل ہونے لگا۔ ادھر کفار کا لشکر منتشر ہو کر لوٹ گیا جبکہ بنی قریظہ آکر اپنے قلعوں میں محفوظ ہو گئے۔ اور رسول اللہ ﷺ واپس مدینہ چلے آئے ۔ سعد رضی اللہ عنہ کے لئے چرمی خیمہ مسجد کے اندر نصب کر دیا گیا۔

سعد ؓاور بنو قریظہ

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کہتی ہیں کہ جبرئیل علیہ السلام آئے، اور پوچھا : یا رسول اللہﷺ آپ نے لباس جنگ اتار دیا ہے ؟ واللہ فرشتوں نے تو ابھی تک نہیں اتارا۔ آپ ﷺ بنی قریظہ کی طرف روانہ ہوں اور ان سے جنگ کریں۔ چنانچہ آپ ﷺ نے زرہ پہن لی اور لوگوں کو حکم فرما دیا کہ وہ بھی بنی قریظہ کی طرف روانہ ہوں۔ پھر آپ ﷺ نے بنی قریظہ کا محاصرہ کر لیا جو کہ ۲۵ روز تک جاری رہا ۔

جب محاصرہ سخت ہو گیا اور مصیبت بڑھ گئی تو ان کو پیغام بھیجا کہ تم رسول اللہ ﷺ کا فیصلہ قبول کرتے ہوئے نیچے اتر آؤ۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ ہم سعد بن معاذؓ کے فیصلے کو قبول کریں گے۔ تو رسول اللہ ﷺ نے ان کا مطالبہ منظور کر لیا ۔ چنانچہ حضرت سعد بن معاذ ؓ   کو ان کی بیماری کے باعث گدھے پر سوار کرا کے لایا گیا ۔ ان کے گرد و پیش قوم کا ہجوم تھا جو سفارش کر رہے تھے : اے ابو عمرو! وہ آپ کے دوست اور حلیف ہیں اور سخت مصیبت زدہ اور ناگفتہ بہ حالت میں ہیں۔ حضرت سعدؓ سن رہے تھے اور ان کی بات کو کچھ اہمیت نہ دے رہے تھے ۔ چلتے چلتے اپنے محلے میں آئے تو ان سے مخاطب ہوئے :

اب وقت آ گیا ہے کہ میں اللہ کی راہ میں کسی ملامت کرنے والے کی ملامت اور سرزنش کی پرواہ نہ کروں۔

(یہ ان امور میں سے ایک ہے جن پر انصار نے حضور ﷺ سے عقبہ کی دوسری بیعت کے وقت بیعت کی تھی ۔)

پھر حضرت سعد ؓنے فیصلہ سناتے ہوئے کہا : میرا ان کے بارے میں فیصلہ یہ ہے کہ ۔۔۔

۔۔۔ ان کے جنگجو مرد قتل کر دیئے جائیں

۔۔۔ اور بال بچوں کو قید کر لیا جائے

۔۔۔ اور مال و متاع تقسیم کر دیا جائے۔

یہ فیصلہ سن کر رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: بے شک اللہ کا سات آسمان کے اوپر سے جو فیصلہ تھا، تم نے اس کے مطابق فیصلہ کیا۔  چنانچہ بنی قریظہ کے سارے جنگجو مرد قتل کر دیئے گئے جن کی تعداد مختلف روایات میں سات سو کے لگ بھگ بتائی جاتی ہے۔

پھر سعد ؓنے دعا کی : یا اللہ ! اگر قریش کی جنگ کچھ باقی رہ گئی ہے تو مجھے اس کے لئے باقی رکھ اور اگر تو نے ان کی لڑائی ختم کر دی ہے تو  مجھے اپنے پاس بلا لے ۔ اس کے بعد وہ مسجد نبوی میں اپنے خیمے میں واپس چلے گئے۔ وہیں رات میں زخم پھر پھوٹ پڑا یہاں تک کہ وہ اسی زخم سے فوت ہو گئے۔ ان کی وفات پر حضرت جبرئیل علیہ السلام ریشمی عمامہ پہنے ہوئے آئے اور پوچھا کہ اے محمد ﷺ یہ کون سی میت ہے کہ جس کےلئے آسمان کے سب دروازے کھل گئے ہیں اور اللہ کا عرش خوشی سے جھوم رہا ہے۔ حضور ﷺ کو اندازہ ہو گیا کہ وفات پانے والے حضرت سعدؓ ہیں۔ چنانچہ آپ ﷺ ان کے گھر کی جانب چلے۔ اور اتنا تیز چلے کہ ساتھ چلنے والے صحابہؓ  کو دقت پیش آنے لگی اور تیزی کی وجہ سے ان کے جوتوں کے تسمے ٹوٹنے لگے ۔
janaza

حضرت سعد رضی اللہ عنہ کا جنازہ اٹھایا گیا تو منافقوں نے ( بنی قریظہ کے فیصلہ کی بنا پر ) کہا کہ جنازہ کس قدر ہلکا پھلکا ہے ۔ رسول اللہ ﷺ سے اس بارے میں دریافت ہوا تو آپ ﷺ نے فرمایا کہ ہلکا اور بے وقار نہیں ، اس کو فرشتوں نے اٹھایا ہوا ہے ۔ نیز یہ بھی فرمایا کہ ستر ہزار فرشتے اترے ہیں جو سعد ؓ کے جنازے میں شریک ہوئے ہیں ، اور ان فرشتوں نے آج سے پہلے زمین پر قدم نہیں رکھا۔

حضور ﷺ کا اپنے صحابہ ؓ کے بارے میں ارشاد گرامی ہے:

sahaba

اصحابی کا لنجوم، بایھم اقتدیتم اھتدیتم

مفہوم: میرے صحابہؓ ستاروں کی مانند ہیں ، ان میں سے جس کی بھی اقتدا کرو گے ، ہدایت پا جاؤ گے۔

حضور ﷺ کے اس جلیل القدر صحابی ؓ  کی زندگی میں جانثاری و وفا شعاری کے جو درخشندہ ابواب نظر آتے ہیں وہ تمام مسلمانوں کے لئے مشعل راہ ہیں۔ انہوں نے حضور ﷺ کی ہدایات و تعلیمات کو جس طرح اپنایا، وہ ان کی زندگی میں جا بجا نظر آتا ہے ۔ بالخصوص بنی قریظہ کا فیصلہ سناتے وقت ان کی زبان سے نکلے ہوئے کلمات ۔۔۔

اب وقت آ گیا ہے کہ میں اللہ کی راہ میں کسی ملامت کرنے والے کی ملامت اور سرزنش کی پرواہ نہ کروں۔

بحیثیت مسلمان اگر صرف اسی ایک نکتے کو زندگی کا نصب العین بنا لیا جائے تو انشا ء اللہ اخروی نجات کے لئے کافی ہو گا … یعنی دین کے ہر ہر حکم اور تقاضے پر عمل کیا جائے اور اس سلسلے میں ملامت کرنے والوں کی ملامت یا سرزنش کی پرواہ نہ کی جائےچاہے وہ دوست ہوں یا رشتہ دار ، افسر ہوں یا حکمراں، اپنے ہوں یا پرائے۔اللہ رب العزت ہمارے قلوب کو بھی ہدایت کے نور سے اسی طرح روشن فرمائے جس طرح سیدنا سعد بن معاذ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے دل کو منور فرمایا۔آمین !